A A A A A
Bible Book List

اوّل سلاطین 7Urdu Bible: Easy-to-Read Version (ERV-UR)

سلیمان کا محل

بادشاہ سلیمان نے اپنے لئے بھی ایک محل بنوایا۔سلیمان کا محل بننے میں ۱۳ سال لگے۔ اس نے ایک عمارت بھی بنوائی جس کو ” لبنان کا جنگل ” کہا گیا۔ یہ ۱۰۰ کیوبٹ لمبی تھی اور ۵۰ کیوبٹ چوڑی اور ۳۰ کیو بٹ اونچی تھی۔ دیودار کے بنے ستون کی چار قطاریں تھیں۔ ہر ستون کے اوپر دیودار کا تاج تھا۔ دیودار کے شہتیر ستونوں کی قطار کے پار گئے تھے۔ دیودار کے تختے ان چھت کی شہتیروں میں لگے تھے۔ ستونوں کے ہر حصہ میں ۱۵ شہتیر لگے تھے۔ جملہ ۴۵ شہتیر تھے۔ دیوار کی ہر سمت میں کھڑکیوں کی تین قطاریں تھیں۔ کھڑکیاں ایک دوسرے کے روبرو تھیں۔ تین دروازے ہر حصہ پر تھے۔ تمام دروازے اور چوکھٹیں مربع تھیں۔

سلیمان نے“پیش دہلیز ” کے ستون بھی بنوائے تھے۔ یہ ۵۰ کیوبٹ لمبے اور ۳۰ کیوبٹ چوڑے تھے اس پیش دہلیز کے سامنے سے ستونوں کے سہارے سے ایک چھت جیسی تھی۔

سلیمان نے ایک درباری تخت کا کمرہ بنایا تھا جہاں لوگوں کا انصاف کرتا تھا۔ اس نے اس کو“انصاف کے کمرے ” کا نام دیا تھا یہ کمرہ فرش سے چھت تک دیودار سے مڑھا تھا۔ جس محل میں سلیمان رہتا تھا وہ انصاف کا کمرہ کے ساتھ تھا اس کو بھی انصاف کا کمرہ کے جیسا ہی بنایا گیا تھا۔ اس نے اسی طرح کا کمرہ اس کی بیوی کے لئے بھی بنوایا تھا۔ جو بادشاہ مصر کی بیٹی تھی۔

یہ تمام عمارتیں قیمتی پتھر کے ٹکڑوں سے بنا ئی گئیں تھیں یہ پتھر صحیح ناپ کے مطابق آرے سے کا ٹے گئے تھے۔ انہیں سامنے اور پیچھے سے کا ٹا گیا تھا یہ قیمتی پتھر عمارت کی بنیاد سے اوپری حصے تک استعمال کئے گئے تھے۔ 10 بنیاد کو بڑے اور قیمتی پتھر وں سے بنا یا گیا تھا۔ کچھ پتھر ۳۰ کیوبٹ لمبے اور دوسرے ۸ کیوبٹ لمبے تھے۔ 11 پتھروں کے اوپر دوسرے قیمتی پتھر اور دیودار کے شہتیر تھے۔ 12 محل کے آنگن کے اطراف دیواریں تھیں یہ دیواریں پتھر کی تین قطاروں میں اور ایک دیودار کی ایک قطار تھی۔

13 بادشاہ سلیمان نے صدر میں حورام نا می شخص کے پاس پیغام بھیجا۔ سلیمان حورام کو یروشلم لا یا۔ 14 حورام کی ماں نفتالی خاندان کے گروہ کی اسرا ئیلی تھی۔ اس کا مرحوم باپ صور کا رہنے وا لا تھا۔ حورام نے کانسہ کی چیزیں بنا ئی تھیں۔ وہ بڑا تجربہ کار اور مشّاق کاریگر تھا۔ اس لئے سلیمان نے اس کو آنے کو کہا اور حورام نے منظور کیا۔ اس لئے سلیمان نے حورام کو کانسہ کے کاموں کا نگران کار بنایا۔ حورام نے کانسے سے چیزیں بنا ئیں۔

15 حورام نے کانسے کے دوستون بنا ئے۔ہر ستون ۱۸ کیوبٹ لمبا اور ۱۲ کیوبٹ گول تھا ستون کھو کھلے تھے اور دھات تین انچ موٹی تھی۔ 16 حورام نے ستون کے دو بالا ئی حصے بھی بنائے۔ 17 تب اس نے دونوں بالا ئی حصّوں پر ڈھانکنے کے لئے زنجیروں کے دو جال بنا ئے۔ 18 پھر اس نے کانسہ کی دوقطاریں بنائیں جو انار کی طرح دکھا ئی دیتی تھیں۔ اس نے اس کانسے کے جالوں کو ستون کے بالائی حصّہ کو ڈھکنے کے لئے بنا یا تھا۔ 19 ستون کے بالا ئی حصے جو ۴ کیوبٹ لمبے ستون پر پھو لوں کی مانند تھے۔ 20 ستونی بالا ئی حصے ستون پر تھے وہ کٹورہ نما جال کے بنے ہو ئے تھے اس جگہ پر دوسو انار کی قطاریں ستون کے با لا ئی حصوں پر تھے۔ 21 حورام نے ا ن کانسہ کے دوستونوں کو ہیکل کی پیش دہلیز پر رکھا تھا۔ ایک ستون داخلہ کے جنوبی جانب تھا دوسرا شمالی جانب اور جنوبی جانب کے ستون کا نام یاکن تھا اور شمالی ستون کا نام بوعز رکھا۔ 22 اس نے پھو ل نما ستونی بالا ئی حصّہ کو ستون کے اوپر رکھا اس طرح دونوں ستونوں کا کام ختم ہوا۔

23 تب حورام نے کانسہ کا گول حوض بنا یا یہ حوض “ سمندر” کہلا تا تھا۔ اس کا قطر تقریباً ۳۰ کیوبٹ تھا۔ یہ آرپار ۱۰ کیوبٹ تھا اور ۵ کیو بٹ گہرا تھا۔ 24 حوض کے باہری سرے چاروں طرف ایک دائرہ بنا ہوا تھا۔ اس دائرے کے نیچے حوض کے اطراف کانسے کے بنے کدّوؤں کی دو قطاریں تھیں۔ کانسے کے یہ کدو حوض کے ایک حصے کی شکل میں ایک اکائی میں بنے تھے۔ 25 حوض کانسے کے بنے ۱۲ بیلوں کے پیٹھ پر تھا۔ تمام ۱۲ بیل حوض کے مخالف سمت میں رخ کئے ہو ئے تھے۔ تین شمال کی جانب سے دیکھ رہے تھے۔ تین مشرق ، تین جنوب اور تین مغرب کی طرف۔ 26 حو ض کا باہری کنارہ تین انچ موٹا تھا۔ حوض کا کنارہ پیالہ کے کنارے کے مانند تھا۔ پھو ل کی پنکھڑ یوں کے جیسے تھے۔ تالاب میں ۰۰۰,۱۱ گیلن پانی کی گنجائش تھی۔

27 تب حورام نے دس کانسے کی گاڑیاں بنا ئیں۔ ہر ایک گاڑی ۴ کیوبٹ لمبی ، ۴ کیوبٹ چوڑی اور ۳ کیوبٹ اونچی تھی۔ 28 گاڑیاں مربع نما تختوں کو چوکھٹوں میں ترتیب کرکے بنا ئی گئی تھی۔ 29 چوکھٹ میں لگے تختوں پر شیر ببر ، بیل اور کروبی فرشتوں کی تصویریں کندہ تھیں۔ ببر اور بیلوں کے اوپر اور نیچے پھو لوں اور بیل کے پودو ں کو کندہ کیا گیا تھا۔ 30 ہر گاڑی میں ۴ کانسے کے پہیے اور ڈنڈے تھے۔ کونوں پر بڑے کانسہ کے کٹورے بنے تھے۔ سارے پھو لوں کے نقش کانسے میں کندہ کئے ہو ئے تھے۔ 31 کٹورے کے اوپری سِرے پر ہر ایک ڈھانچہ بنا ہوا تھا جو ایک کیوبٹ لمبا تھا۔ کٹورے کا کھلا حصہ گول ڈیڑھ کیوبٹ قطر کا تھا۔ اور کانسے کا نقش کندہ ڈھانچہ مربع نما تھا گول نہیں۔ 32 ڈھانچہ کے نیچے چار پہیئے تھے۔ پہیئے کا قطر ڈیڑھ کیوبٹ تھا پہیوں کے دُھرے گاڑی کے ساتھ ایک اکائی کی شکل میں بنے ہو ئے تھے۔ 33 پہیئے رتھ کے پہیوں کے مانند تھے۔ پہیوں کی ہر چیز ،دُھرے ، پٹھیا،ڈنڈے ( ڈریہ) اور ناہ کانسے کے بنے تھے۔

34 ہر گاڑی کے چار سہا رے چاروں کونوں پر تھے اور وہ ایک ہی ٹکڑے سے گاڑی میں بنے ہوئے تھے۔ 35 اور کانسے کی ایک دھاری ہرایک گاڑی کے اوپر کی اطراف لگی تھی۔یہ بھی گاڑی کے ساتھ ایک ہی ٹھوس ٹکڑے سے بنی تھی۔ 36 گاڑی کے بازو اور ڈھانچے پر کروبی فرشتوں ،ببر اور تاڑ کے درختوں کی تصویریں کانسے میں نقس کندہ تھیں۔ یہ تصویریں پوری گاڑی میں کندہ تھیں۔ 37 حورام نے دس گاڑیاں بنائی اور وہ سب ایک جیسی تھیں ہر گاڑی کانسہ سے بنی تھی۔ کانسہ کو پگھلا کر سانچے میں ڈا لا گیا تھا اس لئے سب گاڑیاں ایک جیسی اور ایک ہی ناپ کی تھیں۔

38 حورام نے دس کٹورے بھی بنائے تھے دس گاڑیوں میں ہر ایک کے لئے ایک کٹورہ تھا۔ ہر کٹورہ ۴ کیوبٹ چوڑا تھا اور ہر کٹورہ میں ۲۳۰ گیلن پانی کی گنجائش تھی۔ 39 حورام نے ہیکل کے جنوبی جانب پانچ گاڑیاں رکھیں اور دوسری پانچ گاڑیاں شمالی جانب۔ اس نے بڑے حوض کو ہیکل کے جنوب مشرقی کو نے میں رکھا۔ 40-45 حورام نے برتن ،چھوٹے بیلچے اور چھو ٹے کٹورے بھی بنائے۔ حورام نے یہ چیزیں بادشاہ سلیمان کی خواہش سے بنایا۔ یہ ان چیزوں کی فہرست ہے جو حورام نے خدا وند کی ہیکل کے لئے بنائے :

ستون۔۲

کٹورہ نما ستونی بالائی حصّہ۔۲

بالائی حصہ کے اطراف جال۔۲

دو جالوں کے لئے انار۔۴۰۰

دو قطاریں اناروں کے ہر جال کے لئے جو دو کٹوروں پر ڈھکی تھیں بالائی حصہ کے لئے جو ستون پر تھے۔

گاڑیاں مع کٹورے کے۔

۱۰ بڑا حوض مع ۱۲ بیلوں کے جو اسکے نیچے تھے۔

خدا وند کی ہیکل کے لئے بر تن ،چھو ٹے بیلچے ،چھو ٹے کٹورے اور تمام طشتریاں۔

حورام نے تمام چیزیں بادشاہ سلیمان کی خواہش کے مطابق بنائیں۔ یہ ساری چیزیں چمکائے ہوئے کانسے سے بنائی گئی تھیں۔ 46-47 سلیمان نے کانسے کا وزن کبھی نہیں کیا جو ان چیزوں کے بنانے کے لئے استعمال کیا گیا۔ اس کو تولنا ممکن نہ تھا کیوں کہ بہت زیادہ کانسے کا استعمال کیا گیا تھا۔ اس لئے جملہ کانسے کا وزن معلوم نہ ہو سکا۔ بادشاہ نے حکم دیا کہ سب چیزیں سکّات اور ضرتان کے درمیان دریائے یردن کے قریب بنائی جائیں۔ انہوں نے یہ ساری چیزیں کانسے کو پگھلا کر سانچے میں ڈال کر بنایا۔ 48-50 سلیمان نے سونے کی اور کئی چیزیں بھی خدا وند کی ہیکل کے لئے بنانے کا حکم دیا۔ یہ سونے کی بنی وہ چیزیں ہیں جو سلیمان نے ہیکل کے لئے بنوائیں۔

سونے کی قربان گاہ ،

سونے کی میز ( خاص روٹی خدا کی نذر کے لئے اس میز پر رکھی جاتی )۔

خالص سونے کا چراغ دان ( پانچ جنوبی سمت اور پانچ شمالی سمت میں نہایت مقدس جگہ کے سامنے )

سونے کے پھو ل۔ شمعیں اور کانٹے۔

خالص سونے کے کٹورے ،چمٹے پیالے اور شمعوں کو جلتے رکھنے کے لئے برتن اور اوزار کوئلے وغیرہ کے لئے۔

سونے کے قبضے جو دروازے اور چوکھٹ میں لگائے جاتے ہیں ( نہایت مقدس جگہ کے لئے ) اور ہیکل کے صدر دروازوں کے لئے۔

51 اس طرح بادشاہ سلیمان نے خدا وند کی ہیکل کے لئے جیسا چاہا تھا اسی طرح کام کو ختم کیا۔ تب بادشاہ سلیمان نے وہ چیزیں لیں جو اسکے باپ داؤد نے خاص مقصد کے لئے بچائی تھیں۔ وہ یہ سب چیزیں ہیکل میں لایا اس نے سونے اور چاندی کو خدا وند کی ہیکل کے خزانہ میں رکھا۔

Urdu Bible: Easy-to-Read Version (ERV-UR)

2007 by World Bible Translation Center

  Back

1 of 1

You'll get this book and many others when you join Bible Gateway Plus. Learn more

Viewing of
Cross references
Footnotes