A A A A A
Bible Book List

اوّل سلاطین 18Urdu Bible: Easy-to-Read Version (ERV-UR)

ایلیاہ اور بعل کے نبی

18 تیسرے سال کے دوران بارش نہیں ہوئی خدا وند نے ایلیاہ سے کہا ، “جاؤ بادشاہ اخی اب سے ملو۔ میں جلد ہی بارش بھیجوں گا۔” اس لئے ایلیاہ اخی اب سے ملنے گیا۔

اس وقت سامر میں کھانا نہیں تھا۔ اس لئے بادشاہ اخی اب نے عبد یاہ سے کہا میرے پاس آؤ۔عبدیاہ بادشاہ کے محل کا نگراں کار تھا۔( عبدیاہ خداوند کا سچا ماننے وا لاتھا۔ ایک بار اِیز بل خداوند کے تمام نبیو ں کو مار رہی تھی اس لئے عبدیاہ نے ۱۰۰ نبیوں کو لیا اور انہیں دو غاروں میں چھپا یا عبدیاہ نے ۵۰ نبیوں کو ایک غار میں اور ۵۰ کو دوسرے غار میں رکھا پھر عبدیاہ ان کے لئے کھانا اور پانی لا یا۔) بادشاہ اخی اب نے عبدیاہ سے کہا ، “میرے ساتھ آؤ ہم ہر چشمے اور نالے پر دیکھیں گے شاید کہ ہمیں کہیں گھاس مل جا ئے تا کہ ہمارے گھو ڑے اور خچّر زندہ رہیں۔ پھر ہمیں اپنے جانورو ں کو نہیں مارنا پڑے گا۔” ہر آدمی نے ملک کا ایک حصہ چُنا جہاں وہ پانی کو ڈھونڈ سکے۔ تب دو آدمی پو رے ملک میں گھو مے۔ اخی اب ایک طرف خود گیا اور عبد یاہ دوسری طرف گیا۔ جب عبدیاہ سفر کر رہا تھا وہ ایلیاہ سے ملا عبدیاہ نے ایلیاہ کو پہچان لیا۔ عبدیاہ ایلیاہ کے سامنے جھک گیا اس نے کہا ، “ایلیاہ ؟ کیا یہ آپ ہیں آقا ؟”

ایلیاہ نے جواب دیا ، “ہاں یہ میں ہو ں جاؤ اور اپنے آقا بادشاہ سے کہو کہ میں یہاں ہوں۔”

تب عبدیاہ نے کہا ، “اگر میں اخی اب سے کہتا ہوں کہ میں جانتا ہوں تم یہاں ہو تو وہ مجھے مار ڈا لے گا میں نے تمہا رے ساتھ کو ئی بُرا ئی نہیں کی تم مجھے کیو ں مروا دینا چاہتے ہو؟” 10 میں خداوند کی حیات کی قسم کھا تا ہوں بادشاہ تمہیں ہمیشہ تلاش کر رہا ہے۔ اس نے لوگو ں کو تمہیں تلاش کرنے کے لئے ہر ملک میں بھیجا ہے۔ اگر ملک کا حاکم کہتا ہے کہ تم اس کے ملک میں نہیں ہوتو اخی اب حاکم کو قسم کھلواتا ہے یہ کہنے کے لئے کہ تم اس ملک میں نہیں تھے۔ 11-12 اب تم چاہتے ہو کہ میں جا ؤں اور اسے کہوں کہ تم یہاں ہو۔ تب خداوند تمہیں کسی دوسری جگہ لے جا سکتا ہے۔ بادشاہ اخی اب یہاں آئے گا اور وہ تمہیں نہ پا سکے گا۔ اور وہ مجھے مار ڈا لے گا۔ میں جس وقت بچہ تھا تب سے ہی خداوند کا کہا مانتا ہوں۔ 13 میں نے جو کیا تم نے سُنا ایز بل خداوند کے نبیوں کو جا ن سے ما ر رہا تھا۔ اور میں نے ۱۰۰ نبیو ں کو غار میں چھپایا۔ میں نے ۵۰ نبیوں کو ایک غار میں رکھا اور ۵۰ نبیوں کو دوسرے غار میں رکھا۔ میں اُن کے لئے غذا اور پانی لا یا۔ 14 ا ب تم چاہتے ہو کہ میں جا کر بادشاہ سے کہوں کہ تم یہاں ہو۔ بادشاہ مجھے مار ڈا لے گا۔”

15 ایلیاہ نے جواب دیا ، “میں خداوند کی زندگی کی قسم کھا تا ہوں جس کی میں خدمت کرتا ہوں کہ میں بادشاہ کے سامنے کھڑا ہوں گا۔”

16 اس لئے عبدیاہ بادشاہ اخی ا ب کے پاس گیا اس نے بتا یا کہ ایلیاہ وہاں ہے تو بادشاہ اخی اب ایلیاہ سے ملنے گئے۔

17 جب اخی اب نے ایلیاہ کو دیکھا تو کہا ، “کیا یہ تم ہو ؟ تم وہ آدمی ہو جس نے اسرائیل کو مصیبت میں ڈا لا۔”

18 ایلیاہ نے جوا ب دیا ، “میں اسرا ئیل کی مصیبت کا سبب نہیں ہوں۔ تم اور تمہا را باپ اس مصیبت کا سبب ہو تم مصیبت کا سبب بنے جب تم نے احکام خداوند کی اطاعت رو ک دی اورجھو ٹے خدا ؤں کو ماننا شروع کیا۔ 19 اب تمام اسرائیل سے کہو کہ مجھ سے کرمل کی چوٹی پر ملیں۔ اور اس جگہ پر بعل کے ۴۵۰ نبیوں کو لا ؤ۔ اور جھو ٹی دیوی آشیرہ کے ۴۰۰ نبیو ں کو وہاں لا ؤ جو ملکہ ایز بل کے ٹیبل پر ہر دن کھا تے ہیں۔”

20 اس لئے اخی اب نے تمام اسرائیلیوں اور ان نبیوں کو کرمل کی چوٹی پر بلا یا۔ 21 ایلیاہ ان لوگو ں کے پاس آیا۔ اس نے کہا ، “تم لوگ کب یہ فیصلہ کرو گے کہ تمہیں کس کی اطاعت کرنی چا ہئے ؟ اگر خداوند ہی سچا خدا ہے تو تمہیں اس کی اطاعت کرنی چا ہئے۔ لیکن اگر بعل سچا خدا ہے تو تمہیں اس کی اطاعت کرنی چاہئے۔”

لوگوں نے کچھ نہیں کہا۔ 22 اس لئے ایلیا ہ نے کہا ، “یہاں صرف میں ہی خداوند کا نبی ہو ں لیکن یہاں بعل کے ۴۵۰ نبی ہیں۔ 23 اس لئے دوسانڈ لا ؤ۔ بعل کے نبی ایک سانڈ لیں اور اس کو ذبح کرکے ٹکڑے ٹکڑے کریں پھر گوشت کو لکڑی پر رکھیں۔ لیکن جلنے کیلئے آ گ نہ لگاؤ۔ دوسرے سانڈ کو لے کر میں بھی ایسا ہی کرو ں گا۔ اور میں بھی آ گ نہیں لگاؤ ں گا۔ 24 اے بعل کے نبیو اپنے دیوتاسے دعا کرو۔ اور جس کی بھی لکڑیاں جلنی شروع ہو جا ئیں وہی سچا خدا ہے۔”

تمام لوگو ں نے اس کو قبول کیا کہ یہ ایک اچھا خیال ہے۔

25 تب ایلیاہ نے بعل کے نبیوں سے کہا ، “تم بہت سارے ہو اس لئے تم پہلے جا ؤ سانڈ کو چن کر تیار کرو لیکن آ گ جلانی شروع نہ کرو۔”

26 پھر نبیوں نے ا س سانڈ کو لیا جو انہیں دیا گیا تھا اور اسے تیار کیا۔ پھر وہ لوگ بعل سے دوپہر تک دعا کئے لیکن نہ کو ئی آواز تھی اور نہ ہی کسی نے جواب دیا۔ نبیوں نے اپنی بنائی ہو ئی قربان گاہ کے اطراف ناچ کئے لیکن آ گ نہیں جلی۔

27 دوپہر میں ایلیاہ نے ان کا مذاق اڑا یا۔ ایلیاہ نے کہا ، “اگر بعل حقیقت میں دیوتا ہے تو تب تمہیں بلند آواز سے دعا کرنی ہو گی۔ ہو سکتا ہے وہ سوچ رہا ہو۔ یا پھر وہ مصروف ہو۔ یا ہو سکتا ہے وہ سفر کر رہا ہو۔ وہ سو رہا ہو گا۔ یا ہو سکتا ہے تم بلند آواز سے دعا کرو تو وہ جاگ جا ئے۔” 28 اس لئے نبیوں نے اونچی آواز سے دعائیں کیں وہ لوگ اپنے آپکو تلواروں اور بھالوں سے گھائل کر لئے۔( یہ انکی عبادت کا طریقہ تھا۔) ان لوگوں نے اپنے آپ کو اس قدر گھا ئل کر لیا کہ خون بہنے لگا۔ 29 دوپہر کا وقت گذر گیا لیکن آ گ ابھی تک شروع نہ ہو ئی تھی۔ نبی اس وقت تک جنگلی حرکتیں کرتے رہے۔ جب تک شام کی قربانی کا وقت نہ آ گیا لیکن بعل کی طرف سے کو ئی جواب نہ تھا۔ کو ئی آواز نہ تھی کو ئی بھی نہیں سُن رہا تھا۔

30 تب ایلیاہ نے تمام لوگوں سے کہا ، “اب میرے پاس آؤ اس لئے سب لوگ ایلیاہ کے اطراف جمع ہو ئے۔خداوند کی قربان گا ہ اکھاڑ دی گئی تھی۔” اس لئے ایلیاہ نے اس کو ٹھیک کیا۔ 31 ایلیاہ نے بارہ پتھر حاصل کئے۔ ایک پتھر ہر بارہ خاندانی گروہ کے لئے تھا۔ یہ بارہ خاندانی گروہ کانام یعقوب کے بارہ بیٹوں کے نام سے تھے۔ یعقوب وہ آدمی تھا۔ جسے خداوند نے اسرائیل نام دیا تھا۔ 32 ایلیاہ نے قر بان گاہ کو بنا نے کے لئے اور خداوندکی تعظیم کے لئے ان پتھروں کو استعمال کیا۔ ایلیاہ نے ایک چھوٹا خندق قربان گا ہ کے اطراف کھو دا۔ جو اتنا گہرا اور چوڑاتھا کہ اس میں ۷ گیلن پانی سما سکتا تھا۔ 33 تب ایلیاہ نےقربان گا ہ پر لکڑیاں رکھیں اس کے سانڈ کو کاٹ کر ٹکڑے کئے اور ٹکڑوں کو لکڑی پر رکھا۔ 34 تب ایلیاہ نے کہا ، “چار مرتبان پانی بھرو۔ پانی کو گوشت کے ٹکڑو ں اور لکڑی پر ڈا لو۔” پھر ایلیاہ نے کہا ، “دوبارہ کرو۔” پھر اس نے کہا ، “تیسری بار کرو۔” 35 پانی قربان گا ہ سے بہنے لگا اور کھا ئی بھر گئی۔

36 یہ وقت دوپہر کی قربانی کا تھا اس لئے نبی ایلیاہ قربان گا ہ کے قریب گیا اوردعا کی ، “خداوند خدا ابراہیم ، اسحاق اور یعقوب کے خدا میں اب تجھ سے یہ مانگتا ہوں کہ تو یہ ثابت کر کہ میں تیرا خاد م ہوں۔ ان لوگو ں کو بتاؤ کہ تو نے مجھے یہ سب چیزیں کرنے کے لئے حکم دیا ہے۔ 37 خداوند میری دعا کو سن لے۔ ان لوگو ں کو بتا ؤ کہ تم خداوند خدا ہو تب لوگوں کو معلوم ہو گا کہ تم انہیں اپنی طرف لا رہے ہو۔ ”

38 اس لئے خداوندنے آ گ بھیجی۔ آ گ نے قربانی کے نذرانے کو ، لکڑی کو ، پتھر کو اور قربان گا ہ کے اطراف کی زمین کو جلا یا۔ آگ نے خندق کے اندر کے پانی کو خشک کردیا۔ 39 تمام لوگو ں نے اس واقعہ کو دیکھا تمام لوگ زمین پر جھک گئے اور یہ کہنا شروع کئے ، “خداوند خدا ہے ! خداوند خدا ہے۔”

40 تب ایلیاہ نے کہا ، “بعل کے نبیو ں کو پکڑو ان میں سے کسی کو بھی فرار ہو نے نہ دو۔ ” اس لئے لوگوں نے تمام نبیوں کو پکڑ لیا۔ تب ایلیاہ نے ان سب کو قیسون کے نالے تک لے گیا ا س جگہ پر اس نے سب نبیوں کو مار ڈا لا۔

دوبارہ بارش کا آنا

41 تب ایلیاہ نے بادشاہ اخی اب سے کہا ، “اب جا ؤ کھا ؤ اور پیو۔ موسلا دھار بارش آرہی ہے۔” 42 اس لئے بادشاہ اخی اب کھانے کے لئے گیا۔ اسی وقت ایلیاہ کرمل کی چوٹی پر چڑھ گیا۔ چوٹی کے اوپر ایلیاہ جھک گیا اس نے اپنا سر گھٹنو ں میں ڈا ل دیا۔ 43 تب ایلیاہ نے اپنے خادم سے کہا، “سمندر کی طرف دیکھو۔”

خادم اس جگہ پر گیا جہاں سے سمندر دکھا ئی دے سکے پھر خادم واپس آیا اور کہا ، “میں نے کچھ نہیں دیکھا۔” ایلیاہ نے کہا ، “جا ؤ دوبارہ دیکھو۔” ایسا سات مرتبہ ہوا۔ 44 ساتویں بار خادم واپس آیا اور کہا ، “میں نے ایک چھوٹا سا بادل دیکھا جو آدمی کی مٹھی کے برا بر ہے۔سمندر سے آرہا تھا۔ ”

ایلیاہ نے خادم سے کہا ، “بادشاہ اخی اب کے پاس جا ؤ اور اس کو کہو کہ رتھ لے اور اپنے گھر کی طرف چلے جا ئیں۔ اگر ابھی وہ نہیں نکلے گا تو بارش اس کو روک دے گی۔”

45 تھوڑی ہی دیر بعد آسمان کالے بادلوں سے ڈھک گیا تیز ہوائیں چلنے لگیں اور زوردار بارش شروع ہو ئی۔ اخی اب اس کی رتھ میں سوار ہوا اور یزر عیل کی طرف واپس سفر کیا۔ 46 خدا وند کی طاقت ایلیاہ کے اندر آئی۔ ایلیاہ نے اپنے کپڑوں کو اپنے چاروں طرف کس لیا پھر دوڑنے لگا۔ تب ایلیاہ بادشاہ اخی اب سے دور یزر عیل کے راستے پر دوڑا۔

Urdu Bible: Easy-to-Read Version (ERV-UR)

2007 by World Bible Translation Center

  Back

1 of 1

You'll get this book and many others when you join Bible Gateway Plus. Learn more

Viewing of
Cross references
Footnotes